Home / دلچسپ و عجیب / دنیا میں ہونیوالے قدرت کے پراسرار کرشمے جو ہوش اڑا دینگے

دنیا میں ہونیوالے قدرت کے پراسرار کرشمے جو ہوش اڑا دینگے

انسان کو اس کی عقل اور استدلال نے اس قابل بنایا کہ وہ کائنات کے سربستہ رازوں سے پردہ اٹھا سکے، اور یہی نہیں بلکہ اس نے اپنے ربّ کی تحیرخیز کائنات کواپنی عقل، فہم اور تدبر سے تسخیر کرنے کے لیے بھی قدم بڑھائے اور ہنوز یہ سلسلہ جاری ہے۔

اکیسویں صدی کا انسان یہ سمجھتا ہے کہ وہ ترقی اور شعورکی حدوں کو چھو رہا ہے، لیکن اس مرقعِ اسرار و تحیّر میں، جسے ہم کائنات کہتے ہیں، قدرت اپنے ایسے اعجازو کمالات لے کر بھی سامنے آئی جب انسان اپنے عقلی اور منطقی استدلال ، بہترین اور جدید سائنٹفک آلات، ٹیکنالوجی اور طرح طرح کی سہولیات سے آراستہ تجربہ گاہیں رکھنے کے باوجود ان کے بارے میں سائنسی اور عقلی توجیہہ دینے میں ناکام ہو گیا اور بے بس نظر آیا۔

بہت ممکن ہے کہ کچھ عرصے بعد یہی راز اور ایسے واقعات انسانوں کے لیے معما نہ رہیں لیکن فی الوقت دنیا بھر کے مفکرین اور سائنس دانوں کے پاس کائنات میں پیش آنے والے کئی واقعات کی کوئی دلیل، منطق، سائنسی توجیہہ موجود نہیں اور وہ ا ن سے متعلق حتمی بات کرنے یا ان کا کوئی حل پیش کرنے سے قاصر ہیں۔ یہاں ہم چند ایسے واقعات کا تذکرہ کررہے ہیں جنھیں پراسرار اور انسانی عقل کے لیے چیلنج کہا جاسکتا ہے۔

٭ فائر ٹورنیڈو:

اگست 2018 میں کیلیفورنیا کے جنگل میں آگ لگ گئی۔ یہ آگ گویا قیامت صغریٰ تھی۔ اس آگ نے تیزی سے شہر کا رخ کیا اور ڈھائی لاکھ لوگوں کو ہنگامی طور پر نقل مکانی پر مجبور کر دیا۔ آگ کے شعلے 18 میٹر تک بلند ہورہے تھے۔ تقریباً سات ہزار گھر اور کاروباری مقامات تباہ ہوگئے جس کی وجہ سے اسے ریاست کا سب سے تباہ کن آتش زدگی کا واقعہ کہا گیا۔

اس واقعے کا ایک خوف ناک منظر یہ تھا کہ آگ اور دھویں نے ایک بہت بڑے ٹور نیڈو (آتش باد) کی شکل اختیار کر لی جوآسمان میں کئی ہزار فٹ تک بلند ہوا اور اسے دو میل دور سے بھی دیکھا جا سکتا تھا۔ آگ کے اس طوفانی شکل اختیار کرلینے کے باعث پورے شہر میں گرم ہوائیں چلنے لگیں ۔ دنیا نے اس سے پہلے ایسا منظر کبھی نہیں دیکھا۔ یہ سلسلہ خو د ہی تھما اور ختم ہو گیا، لیکن جنگل میں بھڑکنے والی آگ سے آتش باد نے کیسے جنم لیا؟ ماہرینِ سائنس اس گتھی کو سلجھانے سے قاصر ہیں۔

٭ بر ف کا طوفان:

امریکا کا شمالی علاقہ منیسوٹا متعدد عظیم جھیلوں پر مشتمل ہے۔ اسے امریکا کی 32 ویں ریاست تسلیم کیا گیا ہے اور اسے دس ہزار جھیلوں کی سرزمین بھی کہا جاتا ہے۔یہاں مختلف برسوں کے دوران ناگہانی آفت کی وجہ سے مالی اور جانی نقصانات ہوتے رہے ہیں جن میںسب سے خطرناک ایک جھیل میں برف کا طوفان ہے جو اپنی نوعیت کا عجیب واقعہ ہے۔ دریاؤں کا بپھرنا یا سمندری طوفان یا شدید برف باری کوئی نئی بات نہیں اور ان قدرتی آفات کے نتیجے میں انسان نے مالی اور جانی نقصانات بھی جھیلے ہیں، مگر کسی جھیل میں بننے والا برف کا طوفان انسانی آنکھ نے پہلے کبھی نہیں دیکھا تھا۔ خوف ناک بات یہ ہے کہ برفانی طوفان جھیل اور اس کے قرب و جوار تک محدود نہ رہا بلکہ میلوں دور تک تباہی کا باعث بنا۔اس طوفان کے دوران تیز ہواؤں کی وجہ سے برف کی بڑی بڑی سلوں کے ٹکڑے جھیل کے کناروں اور اس سے دور جاکر گررہے تھے۔

دیکھتے ہی دیکھتے برف کے یہ ٹکڑے آبادی تک پہنچ گئے اور پوری قوت سے عمارتوں اور گاڑیوں سے ٹکرائے جس کی وجہ سے انھیں شدید نقصان پہنچا۔ اسی طرح کا ایک طوفان کینیڈا کے صوبہ مینی ٹوبا میں بھی آیا تھا۔ کینیڈین براڈکاسٹنگ کارپوریشن نے اس واقعے کو رپورٹ کرتے ہوئے بتایا تھا کہ ڈوفن جھیل کے قریب 75 میل شمال مغرب میں برف کے طوفان نے کئی مکانات تباہ کردیے۔ یہ 2013 کی بات ہے جس میں وہاں اٹھنے والی 30 فٹ اونچی برف کی دیوار اتنی طاقت ور تھی کہ اس نے راستے میں آنے والے درختوں، اسٹریٹ لائٹوں غرض ہر شے کو گویا ڈھانپ لیا تھا ۔ ایسی ناگہانی آفت اس سے پہلے دنیا نے کبھی نہیں دیکھی تھی۔ سائنس دانوں کے لیے بھی برف کا طوفان ایک عجوبہ اور معما ہے۔

٭ہزاروں پرندوں کی شہر پر یلغار اور پراسرار موت:

نومبر2007 میں امریکا میں آسٹن نامی ہائی وے پر پرندوں کا ایک غول نمودار ہوا جو عجیب وغریب اشکال بناتے ہوئے محوِپرواز تھے۔ یہ پرندے ایک ساتھ پرواز کرتے اور ایک ساتھ سڑک کے کنارے بیٹھتے دیکھے گئے۔ عینی شاہدین کے مطابق اگر ان کے غول میں کوئی اور پرندہ آجاتا تو یہ اسے مارتے اور بھگا دیتے۔ یہ سلسلہ جاری رہا اور پھر تقریباً تین ہفتوں بعد اچانک یہ پرندے زمین پر گر کر یوں مرنے لگے جیسے کسی نے انھیں مار گرایا ہوا حالاں کہ مقامی لوگوں نے یا انتظامیہ کی جانب سے ایسا کچھ بھی نہیں کیا گیا تھا۔یہ پرندے بڑی بڑی بلڈنگوں کے شیشوں سے ٹکراتے ہوئے آگے بڑھ رہے تھے اور ان کے ٹکرانے سے عمارتوں کے شیشوں کو بھی نقصان پہنچا۔

About Khabrnamcha

Check Also

تیراک پر مگرچھ کا حملہ، ویڈیو بچے نہ دیکھیں

سوشل میڈیا پر مگرمچھوں کی ویڈیو اکثر وائرل ہوتی رہتی ہیں جنہیں دیکھ کر صارفین …